affiliate marketing Famous Urdu Poetry

Friday, 14 August 2015

Isay kahna muhabbat aik sehara hay




اسے کہنا
محبت ایک صحرا ہے
اور صحرا میں کبھی بارش نہیں ہوتی
اور اگر باالفرض ہو بھی تو
فقط اک پل کو ہوتی ہے
اور اس کے بعد صدیاں خشک سالی میں گزرتی ہیں
اسے کہنا
محبت ایک صحرا ہے
اور اس میں وصل کی بارش کو صدیاں بیت جاتی ہیں
مگر پھر بھی نہیں ہوتی
اور اگر باالفرض ہو بھی تو
پھر اس کے بعد صدیوں کی جدائی مار دیتی ہے
اسے کہنا
محبت ایک صحرا ہے
اور صحرا کے سرابوں میں بھٹک جانے کا خدشہ سب کو رہتا ہے
کبھی پیاسے مسافر جب سرابوں میں بھٹک جائیں
انھیں رستہ نہیں ملتا
اسے کہنا
محبت ایک صحرا ہے
وفاؤں کے سرابوں سے اٹا صحرا
محبت کے مسافر گر
وفا کے ان سرابوں میں بھٹک جائیں
تو پھر وہ زندگی بھر ان سرابوں میں ہی رہتے ہیں
کبھی واپس نہیں آتے

Thursday, 16 July 2015

Tery kehnay par lagai hai mehndi main ne part 2

FuLL GhaZaL PaRt 2

Tery kehne py Hathon Py Lagai Hai Mehndi,
Agar to Eid Py Na Aya To Qayamat HoGi,

Yahi Surkh Hath0n K Lahoo Ban K Barsay Gi,
Dekna Phr Shehr Me Ek Shamat HoGi,

Har Kisi Ko Apn0n Ka HoGa Intzar,
Phr Dekhna Qayamat Me Ek Or Qayamat HoGi,

Na Aao Gaye Ab To Phr Kbi Na Pao Gaye,
Kafan Me Lipty Meri Be-Jaan Jisamat HoGi,

Ye Eid To Jaisy B Gzray Gi Teri,
Phr Har Eid Py Tujy Ek He Nadamat HoGi,

Dil T0or K Mera Kahan Khush Raho Gaye ap,
K0i Eid Na Phr apki Salamat HoGi,

Kitny Tarsay Nain Teri Deed Ko Ye Mat P0uch,
Shayid Kisi Ki Aankh0n Me Aisy Qayamat HoGi,

Bas Tery kehne py Hath0n Py Lagai hai mendi..ii..

Tery kehnay par lagai hai mehndi main ne

MuJhe ZiNdaGi MeIn tuMaHaRi ZaRoRaT Ho Gi 
Ye ChaNd LaMho Ki NaHi Umer Ki RaFaQaT Ho Gi 


TeRe KhEnE PaR LaGai Hai Ye MehnDi MeIn Ne 
Too AgAr EiD PaR Na AaYa To QaYaMaT Ho Gi 

SuNo TuM MeRe DiL Se HaRgIz MaT KhelNa WarnA 
PhIr KiSi Ko kiSi Se Na KaBhi MoHabbAt Ho Gi 


MeIn TeRi YaAdOn Se Jan TaK WaZOO Na KaR LoOn 
MuKaMaL Na KaBhi MeRi Bhi IbaDaT Ho Gi 


Too Ne Is EiD Par Bhi GaR ApNa WaDa Na kYa pUrA 

tuJhe ApNe WaDon PaR BaHoT NadaMat Ho Gi

Monday, 18 May 2015

Main Us k Chehre Ko Dil Se Utaar Deta Hoon

Main Us k Chehre Ko Dil Se Utaar Deta Hoon,
Main Kabhi Kabhi tu Khud Ko Bhi Maar Deta Hoon.


Ye Mera Haq Hai K Main Us ko Thora Dukh Bhi Doon,
Main Chahat Bhi Tu Us Ko Beshumar Deta Hoon.


Khafaa Wo Reh Nahi Sakta Lamha Bhar Bhi,
Main Bohat Pehle Hi Us Ko Pukaar Leta Hoon.


Mujhe Siwa Us k Koi Bhi Kaam Nahi Soojhta,
Woh jo Bhi Karta Hai Main Sab Hisaab Leta Hoon.


Wo Sabhi Naaz Uthaata Hai Main jo Bhi Kehta Hoon,
Wo jo Bhi Kehta Hai Main Chupke Se Maan Leta Hoon.

Tujh Se Juda Howay Na Teri Zaat Me Rahe

Tujh Se Juda Howay Na Teri Zaat Me Rahe.
Hum Youn hi sham-e-gham ki hawalaat me rahay.


Kis arsa-e-fareb ki wehsat me thay k hum,
Din me hi reh sakay na kahin raat me rahay.


Ik shehr-e-khwaab hum ne basaya tha or phir,
Us me rahay na uskay muzafaat me rahay.


Kyun cheen'ta hai mujh se mera saya-e-wajood,
Sooraj se koi keh do k auqaat me rahay.


Main jis k roz-o-shab k zamaano me qaid hun,
Mar jaye agar wo mere halaat me rahay.


Har baar koi baat adhori raha karay,
Har baar tishnagi C mulaqat me rahay.

Aankhon Me Aansuon ki Rawani Liye Huwy

Aankhon Me Aansuon ki Rawani Liye Huwy,
Sehra M Chal Raha Hon Main Pani Liye Huwy.


Roodaad Apni kis ko Sunaaon k Sab Yahan,
Bethy Hain Apni Apni Kahani Liye Huwy.


Guzry Dinon ki Soch Me Rehta Hai Dil Abas,
Ek Aarzoo-e-Ahd-e-Jawani Liye Huwy.


Phir Aa Gaya Hai Laot k Mosam Bahaar ka,
Ek Dil'kharaash Yad Dihaani Liye Huwy.


Chehry Badalty Rehty Hain Aksar Yahan Py Log,
Main khush Hun DAAS Shakl Purani Liye Huwy.

Sakht Dil, Gustaakh Nazar or Zalim Lehja

Sakht Dil, Gustaakh Nazar or Zalim Lehja....

Daur-E-Changaiz ka lagta hai Mehboob mera.

Friday, 15 May 2015

وہی بے وجہ سی اداسیاں کبھی وحشتیں ترے شہر میں


وہی بے وجہ سی اداسیاں کبھی وحشتیں ترے شہر میں
تُو گیا تو مجھ سے بچھڑ گئیں سبھی رونقیں ترے شہر میں

مری بے بسی کی کتاب کا کوئی ورق تُو نے پڑھا نہیں
تجھے کیا خبر کہاں مر گئیں مری خواہشیں ترے شہر میں

سبھی ہاتھ مجھ پہ اُٹھے یہاں سبھی لفظ مجھ پہ کسے گئے
مری سادگی کے لباس پر پڑی سلوٹیں ترے شہر میں

وہ جو خستہ حال غریب تھے کہیں بستیوں میں مقیم تھے
اُنہیں کیا ہوا کہ وہ سہہ گئے سبھی تہمتیں ترے شہر میں

یہاں لوگ بکتے ہیں دوستو یہاں تاجروں کی کمی نہیں
ہر شخص کی ہیں لگی ہوئیں کئی قیمتیں ترے شہر میں

اِس سر زمیںِ فریب پہ کوئی انبیا نہ امام تھا
تبھی آ کے گزریں قیامتیں پڑیں آفتیں ترے شہر میں

تُو بھی یادِ ماضی میں ہے مگر کئی خواب اور بھی تھے عقیلؔ 
پھر یہ ہوا کہ دفن ہوئیں سبھی چاہتیں ترے شہر میں

Thursday, 14 May 2015

Rid-e-Khak Ko Hum Noor K Barish Se Dhoen Gay







Rid-e-Khak Ko Hum Noor K Barish Se Dhoen Gay .....

Muhabbat Ko Bna  Den Gay Ibadat ............. Dekhty Jao...!!  ツ

کوﺋﯽ ﺗﻮ ﮬﻮﺗﺎ





  کوﺋﯽ ﺗﻮ ﮬﻮﺗﺎ

,ﺟﻮ ﻣﯿﺮﯼ ﺧﺎﻃﺮ ﺍﺩﺍﺱ ﺟﺎﮌﮮ ﮐﯽ ﺳﺮﺩ ﺭﺍﺗﻮﮞ ﻣﯿﮟ 

ﺭَﺗﺠﮕﻮﮞ ﮐﮯ ﻋﺬﺍﺏ ﺳﮩﺘﺎ

ﺟﻮ ﻣﯿﺮﮮ ﺣﺼﮯ ﮐﮯ ﺯﺧﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﺟﮕﺮ ﭘﮧ ﻟﯿﺘﺎ

ﺟﻮ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺷﮏ ﭘﺎﺗﺎ ﺗﻮ ﺧﻮﻥ ﺭﻭﺗﺎ

ﺟﺪﺍﺋﯽ ﻣﺠﮫ ﮐﻮ ﺍﺩﺍﺱ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﻮ, ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﭘﮩﺮﻭﮞ ﺍﺩﺍﺱ ﺭﮬﺘﺎ

ﻣﺠﮭﮯ ﮔﻠﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ ﻣﯿﮟ

ﻣﯿﮟ خود ﺳﮯ ﺍﮐﺜﺮ ﺍﻟﺠﮫ چکی ﮬﻮﮞ

ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﮔﺮﯾﺰ ﭘﺎ ﮨﮯ

Monday, 11 May 2015

Tumhen Malom Hai...




Tumhen Maloom hai ....

Hum ny  

Kise K hijar Mein

Ye Zindage Kesy Guzari hai 

Hr Ik Khushboo K Aahat Pr 

Guman Us kaGuzarta Tha 

Hr Ik Sat Pr Ye  Dil ......

Aankhon M ein Aa K Beth Jata Tha 

Kae Phelo Badelti Hue Khawishen Haton Ko Phelaey 

Dua'en Mangti Or Hanpti Dil Se 

Guzarti The 

Mager Jo Hijar Lahaq Hai 

Wo Jism-o-Jan K Dewaren Girata Hai

Umeed-o-phem Ke Ankhon Se 

Benaie K Sabhi Manzer

Khak Kerta Hai Or Mitata Hai

So Hum Bhe Khak Hain Or Khak Ke Taqdeer M likha ....!   







Saturday, 9 May 2015

محبت یوں نہیں اچھی ۔۔۔۔






کوئی وعدہ نہیں ہم میں
نہ آپس میں بہت باتیں
نہ ملنے میں بہت شوخی
نہ آخرِ شب کوئی مناجاتیں
مگر ایک ان کہی سی ہے
جو ہم دونوں سمجھتے ہیں
عجب ایک سرگوشی سی ہے
جو ہم دونوں سمجھتے ہیں
یہ سارے دلرُوبا منظر
طلسمی چاندنی راتیں
سنہری دُھوپ کے موسم
یہ ہلکے سُکھ کی برساتیں
سبھی ایک ضد میں رہتے ہیں
مجھے پہم یہ کہتے ہیں
محبت یوں نہیں اچھی
محبت یوں نہیں اچھی ۔۔۔

Ye Muhabbat Bhi Kya Roag Hai Faraz


Ye Muhabbat Bhi Kya Roag Hai Faraz

Jisko Bholen Wo Sda Yaad Aaey 

 یہ محبت بھی کیا روگ ہے فراز
جسکو بھولیں وہ سدا یاد آئے

محبت موسم نہیں


میں نے جانا ہے کہہ
محبت موسم نہیں 
اپنی مدت پوری کرے 
اور رخصت ہو جائے
محبت ساون نہیں،ٹوٹ کر برسے
محبت آگ نہیں،سلگے بھڑکے
اور بجھ جائے
محبت آفتاب نہیں،ابھرے چمکے اور ڈھل جائے
محبت تو چاند کی مانند ہے
جو بڑحتا ہے،گھٹتا ہے
نکلتا ہے،چھپتا ہے
مگر فنا نہیں ہوتا

محبت میں کسی بھی بات کی قسمیں نہیں کھاتے



محبت میں کسی بھی بات کی قسمیں نہیں کھاتے
محبت تو فقط پیمان ہوتا ہے کہ دونوں
زندگی کے روز و شب کے درد کو
مل کر سمیٹیں گے
خوشی کا کوئی لمحہ ہو
وہ مل کر گزاریں گے
کوئی پیمان ہو
وہ کبھی بھی جھوٹا نہیں ہوتا
کہ دونوں میں سے کوئی ایک تو
وعدہ نتھاتا ہے
نفی کرتا ہے اپنی ذات کی
خود کو مٹاتا ہے
محبت میں کسی بھی بات کی قسمیں نہیں کھاتے

Friday, 8 May 2015

Chand Badla Hai............... Kabhi Gheel bdal Jany Se



 Chaand Badla Hai.......... Kabhi Gheel Badal Jany Se

Aaina Koe Bhi Ho........... Aaks Tumhara Ho Ga

Hanse Kay Rang Bohat Meharban Thy Laken



Hansi Kay Rang Bohat Meharban Thy Laken

Udaseeon se he Nabthi Khameer Esa Tha 

اگر کبھی میری یاد آئے



اگر کبھی میری یاد آئے


تو چاند راتوں کی نرم دل گیر روشنی میں 
کسی ستارے کو دیکھ لینا 
اگر وہ نخلِ فلک سے اُڑ کر تمہارے قدموں میں آگرے تو 
یہ جان لینا، وہ استعارہ تھا میرے دل کا، 
اگر نہ آئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 
مگر یہ ممکن ہی کس طرح ہے کہ تم کسی پر نگاہ ڈالو 
تو اُس کی دیوارِ جاں نہ ٹوٹے 
وہ اپنی ہستی نہ بھول جائے 
اگر کبھی میری یاد آئے 
گریز کرتی ہوا کی لہروں پہ ہاتھ رکھنا 
میں خوشبوؤں میں تمہیں ملوں گا 
مجھے گلابوں کی پتیوں میں تلاش کرنا 
میں اوس قطروں کے آئنوں میں تمہیں ملوں گا 
اگر ستاروں میں،اوس قطروں میں، خوشبوؤں میں نہ پاؤ مجھ کو 
تو اپنے قدموں میں دیکھ لینا 
میں گرد ہوتی مسافتوں میں تمہیں ملوں گا 
کہیں پہ روشن چراغ دیکھوں تو جان لینا 
کہ ہر پتنگے کے ساتھ میں بھی بکھر چکا ہوں 
تم اپنے ہاتھوں سے اُن پتنگوں کی خاک دریا میں ڈال دینا 
میں خاک بن کر سمندروں میں سفر کروں گا 
کسی نہ دیکھے ہوئے جزیرے پہ رُک کے تم کو صدائیں دوں گا 
سمندروں کے سفر پہ نکلو تو اُس جزیرے پہ بھی اُترنا

تو مرا کچھ نہیں لگتا ہے مگر جانِ حیات



تو مرا کچھ نہیں لگتا ہے مگر جانِ حیات
 
جانے کیوں تیرے لیئے دل کو دھڑکتا دیکھوں

برسوں کے بعد ديکھا اک شخص دلرُبا سا


برسوں کے بعد ديکھا اک شخص دلرُبا سا 

اب ذہن ميں نہيں ہے پر نام تھا بھلا سا 
ابرو کھنچے کھنچے سے آنکھيں جھکی جھکی سی 
باتيں رکی رکی سی لہجہ تھکا تھکا سا 
الفاظ تھے کہ جگنو آواز کے سفر ميں تھے 
بن جائے جنگلوں ميں جس طرح راستہ سا 
خوابوں ميں خواب اُسکے يادوں ميں ياد اُسکی 
نيندوں ميں گھل گيا ہو جيسے رَتجگا سا 
پہلے بھی لوگ آئے کتنے ہی زندگی ميں 
وہ ہر طرح سے ليکن اوروں سے تھا جدا سا 
اگلی محبتوں نے وہ نا مرادياں ديں 
تازہ رفاقتوں سے دل تھا ڈرا ڈرا سا 
کچھ يہ کہ مدتوں سے ہم بھی نہيں تھے روئے 
کچھ زہر ميں بُجھا تھا احباب کا دلاسا 
پھر يوں ہوا کے ساون آنکھوں ميں آ بسے تھے 
پھر يوں ہوا کہ جيسے دل بھی تھا آبلہ سا 
اب سچ کہيں تو يارو ہم کو خبر نہيں تھی 
بن جائے گا قيامت اک واقعہ  ذرا سا 
تيور تھے بے رُخی کے انداز دوستی کے 
وہ اجنبی تھا ليکن لگتا تھا آشنا سا 
ہم دشت تھے کہ دريا ہم زہر تھے کہ امرت 
ناحق تھا زعم ہم کو جب وہ نہيں تھا پياسا 
ہم نے بھی اُس کو ديکھا کل شام اتفاقا 
اپنا بھی حال ہے اب لوگو فراز کا سا