affiliate marketing Famous Urdu Poetry

Thursday, 17 August 2017

Zindagi

تیرے دام سے نکل کر زندگی
جانے کس دام میں جا الجھی ھے
پیچھے بھی رسوائی تھی
آگے بھی تنہائی ھے

ساریہ چوہدری

اب کے دل میں

اب کے دل میں 
اک قبرستان بنا ڈالا ھے
جب بھی تیری یاد آئے گی
چپکے سے دفنا آئیں گے

ساریہ چوہدری

للہ...اللہ...اللہ ھو لاالاالہ ھو

                          حمد 
اللہ...اللہ...اللہ ھو لاالاالہ ھو
تجھ سے ھے میری بس اک ھی دعا
معاف کر دے تو میری ہر اک خطا
نام ھے غفعور تیرا
اللہ...اللہ....اللہ ھو
جب بھی پڑی ھے مشکل کوئی
جاگ اٹھی ھے میری قسمت سوئی
مولا ھے بڑا رحمن میرا
اللہ ....اللہ....اللہ ھو
میں ھوں بے کس و مجبور بڑا
سنوار دے میری قسمت اک اشارہ تیرا
مالک ھے بڑا مہربان میرا
اللہ...اللہ...اللہ ھو
تو غفعور بھی ھے تو شکور بھی ھے
تو جبار بھی ھے تو قہار بھی ھے
تو ھی رحیم بھی تو رحمن بھی ھے
کر دے کرم بس میرے مولا
بڑا ھی مہربان ھے مولا تو
اللہ ...اللہ اللہ ھو....لا الاالہ ھو

ساریہ چوہدری گجرات

سبھی رنگ تیری چاھت کے آج اتر جانے دے

       غزل
سبھی رنگ تیری چاھت کے آج اتر جانے دے
ٹھہر جا دو پل کہ ھمیں پتھر کا ھو جانے دے
پھر نجانے تجھے میسر بھی آئیں فرصتیں کہ نہیں
کچھ پل جو میرے ساتھ ھو تو میری ھمراھی میں گزر جانے دو
تیرے بعد تو روز جئیں گے روز مریں گے ھم 
آئیں گے تجھے بھی یاد زرا موسم ھجراں گزر جانے دو
زندگی میری تھی اسے دنیا والوں نے گزارا
ھوگا سبکو احساس ذرا ھمکو مر جانے دو

ساریہ چوھدری

وقت کے ساتھ ساتھ

وقت  کے  ساتھ  ساتھ  میں  بہت  کچھ  سمجھتی گئی  
لوگوں  نے مجھے  چپ کرا دیا  اور  میں  چپ ہوتی گئی  
ہر  کوئی  نظرانداز  کرتا  رہا  
اور  میں  نظرانداز  ہوتی  رہی  
دل میں  ہیں  بہت  سی  باتیں  
پر کوئی  سنتا  نہیں  
خوش  تھی  میں  بھی  اپنے بچپن  میں  
پر کبھی  کسی نے مجھے  بچہ  سمجھ ہی  نہیں 


Wednesday, 16 August 2017

جو میں نے پوچھا کہ ساتھ دو گے؟




جو میں نے پوچھا کہ ساتھ دو گے؟
کہا تھا تم نے
بہت ہیں ساتھی
نہیں ہے ممکن
سبھی کو کھو کر تمہارا ہونا
منا کے ماتم بہت ہے سوچا
یقین آیا کے تم ہو سچے
تمہاری فطرت ہی میں نہیں ہے
کے خود سے ہٹ کر
کسی کو سوچو
نہیں ہے چاہت
تمہیں کسی کی
کسی کو چاہو
تو اس کو روکو
ہماری خواہش سدا یہی تھی
یہی رہے گی
سہل ہو جیون تمہارا ہمدم
ملے جو فرصت تو ملنا مجھ سے
تمہارے مسئلے کا حل ہے سوچا
سبھی کو کھو کر ہمارا ہونا
تمہیں جو دشوار لگ رہا تھا
تو فکر چھوڑو
سبھی کو رکھو بنا کے ساتھی
تمہیں بدلنا نہیں ہے آتا
تو کیا ہوا پھر
کہانی باقی وہی رہے گی
بس ایک کردار مر گیا ہے
ملے جو فرصت تو اس سے ملنا
________

Saturday, 12 August 2017

Mujhe zindgi se kia mila by Sophia

مجھے  زندگی میں  کیا    ملا
اس کی  مجھے  کیا خبر
دل بہت  ٹوٹا  آنسو  بہت  بہائے
اس کی کسی  کو  کیا خبر
تھی میں  سب کے درمیاں اکیلی
اس کی کسی  کو کیا  خبر
ہاتھ تھے میرے  خالی
دل میں  تھی بےقراری
رہی  زندگی  تو
پوچھوں گی  ان لوگوں  سے
زندگی  تو دو دن کی ہے
آج میری  تو
کل تیری  باری ہے

Monday, 31 July 2017

چلو خوابوں میں ملتے ہیں

چلو خوابوں میں ملتے ہیں
کہ نیندیں بانٹ لیتے ہیں
زمانے کی نظر سے دور جا کر گھوم آتے ہیں
نئی دنیا بساتے ہیں
جہاں نہ کوئی روکنے والا
نہ ٹوکنے والا ہو
نہ کوئی خوف دنیا کا
نہ کوئی ڈر زمانے کا
جہاں بارش محبت کی
ہمیں مدہوش کر جائے
تمھارے سامنے میں ہوں
ہمارے سامنے تم ہو
چلو اس زندگانی میں
امر کرلیں اپنی کہانی کو
تو پھر خوابوں ملتے ہیں
محبت اوڑھ لیتے ہیں

چَل آ اِک ایسی نظم کہوں۔۔!


چَل آ اِک ایسی نظم کہوں۔۔!
جو لفظ کہوں وہ ہو جائے۔۔
بس’’ اشک‘‘ کہوں تو،
اِک آنسو ترے گورے گال کو دھو جائے۔۔
مَیں’’ آ‘‘ لکھوں،
تُو آ جائے۔۔
میں ’’بیٹھ‘‘ لکھوں،
تُو آ بیٹھے۔۔
مرے شانے پر سر رکھے تو،
مَیں’’نِیند‘‘ کہوں،
تُو سو جائے۔۔
میں کاغذ پر’’تِرے ہونٹ‘‘ لکھوں،
تِرے ہونٹوں پر مُسکان آئے۔۔
میں’’ دِل‘‘ لکھوں،
تُو دِل تھامے۔۔
میں’’ گُم‘‘ لکھوں،
وہ کھو جائے۔۔
تِرے ہاتھ بناؤں پینسِل سے،
پھر ہاتھ پہ تیرے ہاتھ رکھوں۔۔
کُچھ’’ اُلٹا سِیدھا‘‘فرض کروں،
کُچھ’’ سِیدھا اُلٹا ‘‘ہو جائے۔۔
میں’’ آہ ‘‘لِکھوں،
تُو "ہائے" کرے۔۔
’’بے چین‘‘ لکھوں،
بے چین ہو تُو۔۔
پھر میں بے چین کا ’’ب ‘‘کاٹوں،
تُجھے چین زرا سا ہو جائے۔۔
ابھی’’ ع‘‘ لکھوں،
تُو سوچے مجھے۔۔!
پھر’’ش‘‘ لکھوں،
تِری نیند اُڑے۔۔!
جب’’ ق‘‘ لکھوں،
تُجھے کُچھ کُچھ ہو۔۔
مَیں’’ عِشق ‘‘لِکھوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔تُجھے ہو جائے..

Wednesday, 19 July 2017

Pehla fiqra by Saria Chaudhary

          غزل
سبھی رنگ تیری چاھت کے آج اتر جانے دے
ٹھہر جا دو پل کہ ھمیں پتھر کا ھو جانے دے
پھر نجانے تجھے میسر بھی آئیں فرصتیں کہ نہیں
کچھ پل جو میرے ساتھ ھو تو میری ھمراھی میں گزر جانے دو
تیرے بعد تو روز جئیں گے روز مریں گے ھم 
آئیں گے تجھے بھی یاد زرا موسم ھجراں گزر جانے دو
زندگی میری تھی اسے دنیا والوں نے گزارا
ھوگا سبکو احساس ذرا ھمکو مر جانے دو

ساریہ چوھدری


Hamd by Saria Caudhary


                         حمد
اللہ...اللہ...اللہ ھو لاالاالہ ھو
تجھ سے ھے میری بس اک ھی دعا
معاف کر دے تو میری ہر اک خطا
نام ھے غفعور تیرا
اللہ...اللہ....اللہ ھو
جب بھی پڑی ھے مشکل کوئی
جاگ اٹھی ھے میری قسمت سوئی
مولا ھے بڑا رحمن میرا
اللہ ....اللہ....اللہ ھو
میں ھوں بے کس و مجبور بڑا
سنوار دے میری قسمت اک اشارہ تیرا
مالک ھے بڑا مہربان میرا
اللہ...اللہ...اللہ ھو
تو غفعور بھی ھے تو شکور بھی ھے
تو جبار بھی ھے تو قہار بھی ھے
تو ھی رحیم بھی تو رحمن بھی ھے
کر دے کرم بس میرے مولا
بڑا ھی مہربان ھے مولا تو
اللہ ...اللہ اللہ ھو....لا الاالہ ھو
ساریہ چوہدری گجرات
https://ssl.gstatic.com/ui/v1/icons/mail/images/cleardot.gif

Yaad by Saria Chaudhary

اب کے دل میں
اک قبرستان بنا ڈالا ھے
جب بھی تیری یاد آئے گی
چپکے سے دفنا آئیں گے
ساریہ چوہدری



Maa by Saria Chaudhary

مشہور فلاسفر نپولین کا قول ھے کہ
"مجھے اک اچھی ماں دو میں تمہیں اک عظیم 
قوم دوں گا"..
اک مشہور کہانی بھی سناتی ھوں کہ اک
استاد صاحب کلاس میں بچوں سے پوچھ رہے
تھے آپ  بڑے ھو کر کیا بنیں گے ؟ سب بچے
بتا رھے تھے سر میں ڈاکڑ بنوں گا کسی نے کہا
سر میں انجینئر بنوں گا کسی نے کہا سر میں
وکیل بنوں گاکسی نے سر میں پائلٹ بنوں گا
اک بچہ کھڑا ھوا بولا سر میں اصحا بی بنوںگا
سب بچے ہنسنے لگ گئے سر نے پوچھا بیٹا آپ 
کیوں اصحابی بننے کا سوچا؟ بچہ بولا سر
میری ماں روز رات کو سونے سے پہلے مجھے
اک اصحابی کی کہانی سناتی ھیں میں وہ
کہانیاں سن کے اندازہ لگایا اس دنیا میں اگر
کوئی بہت عظمت والا اور رتبے والا ھے تو وہ
ا صحابی  ھیں اسلئے میں بھی اصحا بی بنو ں
گا.....اا کہانی سنا نے کا مقصد بس اتنا تھا کہ
آپنے دیکھا بچے کو وہی یاد تھا اسنے وہی کچھ
سیکھا جو اسکی ماں نے سکھایا  بتایا..اک ماں
بچےکو بچپن سے جو سکھا تی ھے وہی اسکے
ذھن میں بیٹھ جاتا رچ بس جاتا  بڑا ھونے کے
بعداسے جو بھی سکھایا جائے وہ ویسے نہیں
سیکھ پا تا جیسے بچپن کا پڑھایا ذھن نشین
رھتا ھے...آجکل ھمارے ملک کے جو حالات
ھیں سب حکو مت کو کوس رھے بیں کہ حکو
مت یہ نہیں کیا ایسا کر رھی ھے حکومت
سسٹم بدلنا چاہئے نیا پاکستان بنائیں وغیرہ
وغیرہ.مجھے بتا ئیں آپ لوگ، آپ سب جو
دوسروں کو الزام دیتے ھیں حکومت کو کوستے
ھیں کبھی اپنے گریبان میں جھانک کے دیکھا
آپ نے وطن کو کیا دیا وطن کے لئے کیا کیا؟
دوسروں پہ الزام تراشی سے بہتر ھے بندہ  اپنے
آپکو دیکھے  یقین مانئیے اک ایسا معاشرہ
جہا ں پانی کے کولروں کے ساتھ رکھے
گلاسوں کو زنجیروں کے ساتھ باندھ کے رکھنے
کی ضرورت ھو اور جہاں  مسجدوں میں
نمازوں کی بجائے اپنے جوتوں کی فکر رھتی ھو
وہاں سسٹم نہیں بدلا کرتے.وہاں حکومتیں
بدلنے سے حالات نہیں بدلتے وہاں ضرورت
ھوتی ھے سوچ بدلنے کی اپنا  آپ بدلنے کی ،
اور اسکے لئے ضرورت ھے اک اچھی ماں کی
جو آپکی نسل بدل سکے معاشرہ بدل سکے اسی
ماں کی جسکا نپولین نے کہا...یہا ں اک اور
کہانی سناتی ھوں کہ اک چور تھا بہت ساری
چوریوں  کے بعد جب پکڑا گیا تو اسے سزائے
موت سنا دی گئی  پولیس نے جب اس سے
آخری خواہش پوچھی گئی تو اسنے کہا پہلے
میری ماں کو پھانسی دی جائے سب حیران
ھوگئے کہ کیوں؟؟؟ جب اس سے وجہ پوچھی
گئی تو اسنے کہا بچپن میں میں نے اک چوری
کی تھی تو میری ماں نے مجھے شاباش دی
تھی بات پھر وہی آئی کہ ماں نے جو سکھایا
اسنے   وہی سیکھا آج ھم اپنے ماحول کو سسٹم
بدلنے کی بات کرتے ھیں اپنے حکمرانوں کو
الزام دیتے ھیں آخر ان حکمرانوں کو جنم دینے
والی بھی تو اک ماں تھی نا ھمارے بانی
پاکستان کو جنم دینے والی بھی اک ماں تھی
تو انسانیت کے دشمن  دہشت گرد انکی 
پیدائش کے پیچھے بھی اک ماں ھے نا آپ
حکومت کو مت دیکھیں  آپ اپنی تربیت پہ
غور کریں اگر آپنے اک اچھی بیٹی اور  بہن کی
پرورش کی ھے تو آپ سو فیصد یقین کر لیں
اک دن یہ سسٹم بدلے گا اور ضرور بدلے گا
ضرورت ھمیں اک اچھے حکمران کی نہیں اک
اچھی بہن اور بیٹی کی ھے جو اک اچھی نسل
کی ہرورش کر سکے  جو آگے چل کر اک
معاشرہ ببنے گا اک ریاست اک قوم بنے گی
اپنی سوچ کو بدلیں اپنی بیٹی کو اچھی سوچ
دیں یہ سوچ ھی ھے جو قوموں کی تقدیر
بدلتی ھے جہاں ننگے جسموں ہھرنے والی
عورتیں ھوں اور سر بازار  پوسٹروں اور
اشتہاروں کی صورت بیچ گلی چوراھوں کی
زینت بنی ھوں  جنہیں اپنی عزت اپنے مقام
تک کی پہچان نہ ھو جو دل میں بغض رکھ
کے دوسروں کے لئے گھڑے کھودیں وہ عورتیں
محمد بن قاسم اور طارق بن زیاد جیسے عظیم
لیڈر جنم نہیں دے سکتی وہا ں غدار اور یزید
جیسے لوگ جنم لیتے ھیں ( اب میں ان یزیدوں
کا نام نہیں لیتی آپ سب تو واقف ھیں نا؟)
ھمیں خود کو بدلنا ھے اپنی سوچ کو بدلنا ھے
اپنے گریبان میں جھانک کے دیکھنا ھے اک
اچھی بیٹی اود اچھی بہن کی پرورش کرنی ھے
آپکا معاشرہ آپکا سسٹم خود بخود بدلے گایہ
صرف دعوی نہیں چیلنج ھے اور آزمائش شرط
ھے خدا آپکو مجھے عمل کی تو فیق دے (آمین)
وہ انسان نہیں جو ڈر جائے حالات کے خونی
منظر سے
جس دور میں جینا مشکل ھو اس دور میں جینا
لازم ھے  
از قلم ساریہ چوہدری